Refutation of Mawdūdī’s ideology of Obedience being Worship | Shaykh Safīʾur-Raḥmān al-Mubārakfūrī

Introduction

A view of Mawdūdī1 upon which he stood with great firmness and the reality is that he laid the foundation for his own separate group2 upon this view. And he presented this view so powerfully that even great scholars were influenced by him and they too accepted it. Although they did not enter his group, they were influenced by his thoughts and accepted them. When these views came before me, even I was confused for a few days. But after that Allāh Taʿāla opened this matter in such a clear manner that no type of doubt or confusion remained. Now I will present it before you following which there will be no doubt or confusion for you too if Allāh wills. That is how clearly Allāh Taʿāla has opened it up.

The False Ideology

The view of Maulana (Mawdūdī) was that if there is constant obedience (Iṭāʿah) of someone, then this is essentially worship (ʿIbādah) of that person. The Muslim is in constant obedience of Allāh Taʿāla and he obeys (Iṭāʿah) the Prophet sallAllāhu ʿalayhi wasallam because Allāh Taʿāla commanded to obey him. Thus the obedience of the Prophet sallAllāhu ʿalayhi wasallam is in accordance to the obedience of Allāh Ta’ala, therefore when he sallAllāhu ʿalayhi wasallam is obeyed, it is the obedience of Allāh Taʿāla and this worship becomes the  worship of Allāh. Now from here he (Mawdūdī) has raised another problem that if a government does not govern according to the law laid by Allāh Taʿāla then obeying that government will be worshipping that government and this is Shirk (associating partners with Allāh).3 And this is where he (Mawdūdī) took his view of Shirk in Ḥākimiyyah (rulership) and presented it so strongly that many people are busy with it up until today.

The Rebuttal

Now I will present its truth before you, I mean to say that books of about a hundred, two hundred, three hundred, four hundred, six hundred and in some cases eight hundred pages have been written by many people on this topic. The matter has been confused in such a way and with such long debates that it becomes difficult to imagine. That is why I shall present this matter before you in a few words in a simple way.

Is Iṭāʿah (obedience) the same as ʿIbādah (worship). Or is ʿIbādah something else and Iṭāʿah something else? Understand this well!

To explain this, I will present one or two examples before you.

A youth of Jamaat-e-Islami came to me and started conversing, I too spoke to him. Now he came to his Da’wah (Call), that Sahib (Sir), this is our Da’wah.

I said: Yes, I know that. He wanted me to accept it, so I said, “Look this Da’wah of yours is incorrect.”

He asked: How is it incorrect?

I said: If this quote of yours is right that if someone obeys a government and that government does not govern according to the law laid down by Allāh then this obeying (Iṭāʿah) becomes worship (ʿIbādah), if this is right then please do me a favour, go out and look for any muslim on the road, who is riding a bicycle on the left hand side of the road (in India vehicles need to keep left- ‘keep left rule’). Then tell him “O Brother! Do not ride your bicycle this way, it is shirk to ride your bicycle by the left side of the road.”

Now he got extremely irritated and asked: Maulana (referring to the Shaykh) what are you saying ?

I said: I am saying the same thing you said, I am just showing you the consequences of your Da’wah.

He asked: How?

I said: This government of India, is it’s governance in accordance to the laws laid down by Allāh or not?

He said: It is not, it is being governed without recognizing the law of Allāh.

Then I said: So obeying these laws (of the Indian Government) would be shirk or not?

He said: It will be (shirk)

Then I said: The riding of a bicycle on the left side is part of the same law, therefore if someone rides a bicycle on the left side then he is following (the rules of) the government, and this is the obedience which you claim to be worship. And ʿIbādah of other than Allāh is supposed to be shirk. Therefore this (following) becomes shirk.

Now he got extremely worried. He then said: Sahib, now you tell me what is right and what is not.

I said: Now see Iṭāʿah is one thing and ʿIbādah is another. It is possible that sometimes a deed (ʿamal) is Iṭāʿah (obedience) and also ʿIbādah (worship). But it is also possible that a deed is Iṭāʿah but not ʿIbādah. And it is also possible that a deed is ʿIbādah but not Iṭāʿah. All of this is possible.

Worship that is not Obedience

He asked: How come?

I said: Listen, I shall explain to you. Ibrāhīm عليه السلام came to his people and asked

﴿ مَا تَعْبُدُونَ ﴾

“What do you worship?”

Sūrah ash-Shuʿrāʾ 26:70

﴿ قَالُوا نَعْبُدُ أَصْنَامًا فَنَظَلُّ لَهَا عَاكِفِينَ ﴾

They said: “We worship idols, and to them we are ever devoted.”

Sūrah ash-Shuʿrāʾ 26:71

Now tell me whether the idols that the people of Ibrāhīm were worshiping, were they obeying these idols as well? (Rather,) These idols were incapable from the beginning to give a command to do something or to stop doing something. So these people who were worshiping it, it is considered as worship but not obedience in this case. It must be agreed that these people were not obeying but were worshiping.

He agreed to this.

Worship of ʿĪsā عليه السلام is in disobedience to him

Now moving ahead, Allāh Taʿāla has mentioned regarding Christians in many places in the Glorious Qurʾān. Allah Taʿāla will ask ʿĪsā عليه السلام on the day of resurrection  

﴿ أَأَنتَ قُلتَ لِلنَّاسِ اتَّخِذُونِي وَأُمِّيَ إِلَـهَيْنِ ﴾

“O ʿĪsā (Jesus), son of Maryam (Mary)! Did you say unto men: ‘Worship me and my mother as two gods besides Allah?’ ” 

Sūrah al-Māʾidah 5:116

So ʿĪsā عليه السلام will immediately deny this and will say

﴿ وَكُنتُ عَلَيْهِمْ شَهِيدًا مَّا دُمْتُ فِيهِمْ ۖ فَلَمَّا تَوَفَّيْتَنِي كُنتَ أَنتَ الرَّقِيبَ عَلَيْهِمْ ۚ وَأَنتَ عَلَىٰ كُلِّ شَيْءٍ شَهِيدٌ ﴾

“I was a witness over them while I dwelt amongst them, but when You took me up You were the watcher over them and You are a Witness to all things.”

Sūrah al-Māʾidah 5:117

This way he will deny all knowledge about their actions and will declare himself free from what they used to do. Well, and in the same Qurʾān (elsewhere), it is shown regarding the Christians and those who used to worship ʿĪsā عليه السلام, that these people used to worship such a person who cannot give them any gain nor any loss. So it is known that they used to worship ʿĪsā عليه السلام and ʿĪsā عليه السلام cannot give them gain or loss. Now the matter is that, is their worship of ʿĪsā عليه السلام to be considered his obedience also?

I asked him: Their worship is proven, the Qurʾān also refers to this action of theirs as worship. So the Christians who worship ʿĪsā عليه السلام were they obeying him too? They were not obeying ʿĪsā عليه السلام, as ʿĪsā عليه السلام never ordered them to worship him. On the contrary, he had forbidden them from doing so. So they were disobeying him in this matter, and instead of obeying him they were rebelling against him, and (yet) it was worship. So for worship it is not necessary that the one being worshipped is being obeyed. Worship can occur without obeying and even if it were disobedience, will it not be worship?

This is the matter which becomes thoroughly clear. Now that it is clear, what must you know?

Conclusion

To accept someone’s orders and put them into action, this is Iṭāʿah (obedience). And to seek nearness to someone, meaning by pleasing him, regardless of the means taken, then to do something for his pleasure is ʿIbādah. So those people (Christians) used to work for the pleasure of ʿĪsā عليه السلام, therefore this is worship (as they thought this would please him). Yet they were not obedient to him, so this is not obedience. When we offer prayers, we seek Allāh Taʿāla’s pleasure and nearness, in that sense this prayer is worship. And we are acting upon the orders of Allāh, in that sense this prayer is obedience. Iṭāʿah is in a different meaning and ʿIbādah is in a different meaning. Ṣalāh is a single act but it is a combination of both ʿIbādah and Iṭāʿah.

Now as Maulana Mawdūdī has raised this point that continuous Iṭāʿah of someone is ʿIbādah. Therefore he says that if a slave lives his life in following Allāh Taʿāla then the whole life becomes ʿIbādah. But it is apparent by relying on the Qurʾānic view, this whole life will not be ʿIbādah whatsoever, but will be Iṭāʿah if the slave acts upon the commands of Allāh Taʿāla, then he has obeyed his whole life and this is worthy of being rewarded for which he will be rewarded (In sha’ Allāh). But it will not be called ʿIbādah. This is the right conclusion of the meaning.

Translation of the Urdu transcript of a QnA session following a lecture by Shaykh Safīʾur-Raḥmān al-Mubārakfūrī رحمه الله (Reviewed and Headings and Footnotes added by Abū Āsiyāh Muẓaffar al-Hindī -May Allah pardon his sins-)

Footnotes:


  1. Abu A’laa Mawdudi (1903-79) was a Islaamic revolutionary thinker and he founded an Islamic revivalist party based in Pakistan called Jama’at-e-Islami, though he was born in India before partition. He was also a supporter of the Iranian revolution of Ayatollah Khomeinī. In contemporary times, he is regarded as one of the chief ideologues for radical preachers and modern-day Khawarij like Taliban, Al-Qaedah, Daesh (ISIS) and their likes. The leader of Muslim Brotherhood, Syed Qutb, was also heavily influenced by the ideology and writings of Mawdudi.
  2. Jama’at-e-Islami is a Islamic political party established by Mawdudi in 1928. Following partition, it was divided into an Indian and a Pakistani faction
  3. Tawḥīd al-Ḥākimiyyah is to believe that al-Ḥukm (rulership) is only for Allāh and that Allāh is al-Ḥākim (the Ruler). Shirk in al-Ḥākimiyyah is to deny rulership to Allāh or to associate partners with Allāh in this aspect by not implementing the Sharīʿah in the Muslim lands or making changes to it. However, the scholars have clarified that singling out al-Ḥākimiyyah as a fourth category of Tawḥīd is an innovation and that al-Ḥukm (rulership) for Allāh is included within Tawḥīd ar-Rubūbiyyah (Oneness of Allāh subḥānahu wa taʿāla’s Lordship over everything). This doubt was first brought forth by the original Khawārij when they misused the verse “There is no rule but for Allāh,” (12:40) and Alī -May Allāh be pleased with him- responded by saying, “A word of truth by which falsehood is intended.” [Ṣaḥīḥ Muslim 1066] As Shaykh al-Albānī -May Allāh have mercy on him- mentioned when asked about this innovation that, “Usage of the word ‘al-Ḥākimiyyah’ is part of the political da’wah that is particular to some of the parties present today.”

Original Transcript (Urdu):


بتا تو سہی کیا یہ کافری ہے؟ خوارج سے شیخ صفی الرحمن مبارکپوری کا ایک سوال شیخ صفی الرحمن مبارکپوری (رحمۃ اللہ علیہ) م ١٤٢٧ھ ( سیرت نبوی پر لکھی گئی شہرۂ آفاق کتاب “الرحیق المختوم” کے مصنف) “مودودی صاحب کا ایک نظریہ جس پر وہ بڑی پُختگی کے ساتھہ جمے اور حقیقت یہ ہے کے اسی نظریہ کی بنیاد پر انہوں نے اپنی ایک الگ جماعت کی بنیاد رکھی اور اس نظریہ کو اتنی قوت سے پیش کیا کے بڑے بڑے علماء ان سے متاثر ہوگئے اور انہوں نے بھی اسکو قبول کر لیا۔ اگرچہ ان کی جماعت میں داخل نہیں ہوئے مگر متاثر ہوئے اور اسکو قبول کیا۔ میرے سامنے وہ چیز آئی تو میں بھی کچھہ دنوں تک الجھا رہا لیکن اسکے بعد اللہ تعالٰی نے اس مسئلے کو ایسا صاف کھول دیا کہ کسی قسم کا شک و شبہہ باقی نہیں رہا اور ابھی میں آپ کے سامنے پیش کروں گا تو آپ کو بھی ان شاءاللہ کوئی شک و شبہہ باقی نہیں رہے گا، اتنا صاف اللہ تعالٰی نے اس کو کھول دیا۔ مولانا کا نظریہ یہ تھا کہ کسی کی مستقل اطاعت کی جائے تو یہی اس کی عبادت ہے۔ مسلمان اللہ تعالٰی کی مستقل اطاعت کرتا ہے اور نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی اطاعت اس لئے کرتا ہے کہ اللہ تعالٰی نے ان کی اطاعت کا حکم دیا ہے۔ گویا نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی اطاعت جو ہے وہ اللہ تعالٰی کی اطاعت کی ماتحتی میں ہے لہذا آپ کی جب اطاعت کی جائے گی تو اللہ تعالٰی کی اطاعت ہو گی اور یہ عبادت اللہ کی عبادت بنے گی۔ اب وہاں سے انہوں نے ایک دوسرا مسئلہ نکالا کہ اگر کوئی حکومت اللہ تعالٰی کے قانون کی بالا دستی کے بغیر حکومت کر رہی ہو تو اس حکومت کی اطاعت کرنا، یہ اس کی عبادت کرنا ہے اور یہ شرک ہے اور یہیں سے شرک فی الحاکمیت کا نظریہ انہوں نے لیا اور اس کو بڑی قوت کے ساتھہ پیش کیا اور آج تک اس میں بہت سارے لوگ مشغول ہیں۔ اب میں اس کی حقیقت آپ کے سامنے (پیش کرتا ہوں) یعنی سو، دو سو، چار سو، چھہ سو اور کہیں کہیں آٹھہ سو صفحات تک کی کتابیں جو ہیں اس مسئلہ پر لوگوں نے لکھہ ماری ہیں۔ مسئلہ اس قدر الجھا دیا ہے اور اتنی لمبی لمبی بحث کہ اندازہ کرنا مشکل ہو جائے گا، اس لئے میں آپ کے سامنے چند لفظوں مین بہت دو ٹوک طریقے سے اس معاملے کو پیش کرتا ہوں۔ اطاعت عبادت ہے؟ یا عبادت کچھہ اور چیز ہے اور اطاعت کچھہ اور چیز ہے؟ اسکو آپ سمجھئے!​ اسکو سمجھنے کے لئے میں آپ کے سامنے ایک یا دو مثالیں پیش کرتا ہوں۔ میرے سامنے ایک نو جوان آیا جما عت اسلامی کا، باتیں کرنے لگا۔ میں بھی ان سے بات کر رہا تھا۔ اب وہ آیا اپنی دعوت کی طرف کہ صاحب ہماری یہ دعوت ہے، میں نے کہا ہاں میں جانتا ہوں۔ وہ چاہتا تھا کہ میں بھی اسکو قبول کر لوں۔ تو میں نے بولا دیکھو تمہاری یہ دعوت جو ہے صحیح نہیں ہے۔ کہا کیسے صحیح نہیں ہے؟ میں نے کہا کہ اگر یہ بیان تمہارا صحیح ہے کہ کوئی شخص کسی حکومت کی اطاعت کرے اور وہ حکومت اللہ کے قانون کی بالا دستی کے تحت نہ چل رہی ہو تو یہ اطاعت عبادت ہو جائے گی، اگر یہ بات صحیح ہے تو مہر بانی کر کے باہر چلے جاؤ اور کسی مسلمان کو دیکھو کہ وہ سڑک پر با ئیں کنارے سے (ہندوستان میں ہر چیز بائیں کنارے سے چلتی ہے سڑک پر) تو اگر وہ سڑک پر بائیں کنارے سے سائیکل چلا رہا ہو تو اسے کہو کہ بھائی تم ادھر سائیکل مت چلاؤ، اس کنارے میں سائیکل چلانا شرک ہے۔ اب وہ بڑے زور سے بلبلایا کہا کہ مولانا یہ کیا کہہ رہے ہیں؟ میں نے کہا میں وہی بات کر رہا ہوں جو تم نے کہی ہے۔ جو بات تم نے کہی ہے میں اسکا نتیجہ بتا رہا ہوں۔ کہا کیسے؟ میں نے کہا یہ حکومت ہندوستان جو ہے اس کی جو حکومت ہے وہ اللہ کے قانون کی بالا دستی کے بغیر ہے یا اللہ کے قانون کی بالا دستی کے تحت ہے؟ کہا کہ نہیں، اللہ کہ قانون کو تسلیم کیے بغیر حکومت کر رہی ہے۔ تو میں نے کہا اس کے جو قوانین ہونگے ان کی اطاعت کرنا شرک ہوگا یا نہیں ہوگا؟ کہا ہوگا۔ تو میں نے کہا اسی کے قانون کا ایک حصہ ہے کہ سائیکل سڑک کے بائیں کنارے چلائی جائیں۔ لہذا اگر کوئی بائیں کنارے سے سائیکل چلاتا ہے اس حکومت کی اطاعت کرتا ہے اور اسی اطاعت کو آپ عبادت کہتے ہیں۔ اور غیر اللہ کی عبادت کو شرک مانتے ہیں لہذا یہ شرک ہوا۔ اب وہ ایک دم پریشان ہو گیا۔ اس نے کہا کہ صاحب آپ ہی بتائیے کے پھر صحیح کیا ہے اور کیا نہیں ہے۔ میں نے کہا کہ دیکھو اطاعت دوسری چیز ہے اور عبادت دوسری چیز ہے۔ ایسا ہو سکتا ہے کہ کبھی ایک ہی عمل اطاعت بھی ہو اور عبادت بھی ہو لیکن ایسا بھی ہو سکتا ہے ایک عمل اطاعت ہو عبادت نہ ہو۔ اور یہ بھی ہو سکتا ہے ایک عمل عبادت ہو اور اطاعت نہ ہو، یہ سب کچھہ ممکن ہے۔ کہا کیسے ہے؟ میں نے کہا آپ سنیں میں بتاتا ہوں۔ ابراہیم (علیہ السلام) اپنی قوم کے پاس آئے انہوں نے پوچھا کہ ﴿ مَا تَعْبُدُونَ ﴾، (تم لوگ کس چیز کی عبادت کرتے ہو؟) قوم نے کہا ( قَالُوا نَعْبُدُ أَصْنَامًا فَنَظَلُّ لَهَا عَاكِفِينَ ) (الشعراء: ٧٠-٧١)( کہ ہم بتوں کی عبادت کرتے ہیں اور انکے لیے مجاور بن کر بیٹھہ جاتے ہیں)۔ اب یہ بتائیے کہ ابراہیم (علیہ السلام) کی قوم جن بتوں کی عبادت کر رہی تھی کیا وہ ان بتوں کی اطاعت بھی کر رہی تھی؟ وہ بت تو اس لائق سرے سے تھے ہی نہیں کہ کسی بات کا حکم دے سکیں یا کسی بات سے روک سکیں۔ تو یہ قوم جو عبادت کر رہی تھی وہ عبادت تو ہوئی لیکن اطاعت نہیں ہوگی یہاں پر۔ ماننا پڑے گا کہ ہاں بات ٹھیک ہے کہ وہ لوگ اطاعت تو نہیں کر رہے تھے مگر عبادت کر رہے تھے۔ مانا کہ اچھا اور آگے آؤ ذرا سا۔ عیسائیوں کے متعلق اللہ تعالٰی نے قرآن مجید میں کئی جگہ تبصرہ کیا ہے۔ قیامت کے روز پوچھے گا اللہ تعالٰی عیسٰی (علیہ السلام) سے کہ ﴿ أَأَنتَ قُلتَ لِلنَّاسِ اتَّخِذُونِي وَأُمِّيَ إِلَـهَيْنِ ﴾ (المائدة: ١١٦) اے عیسٰی (کیا تم نے یہ کہا تھا کہ لوگوں مجھہ کو اور میری ماں کو معبود بنا لو؟) تو عیسٰی (علیہ السلام) فوراً اسکی نفی کریں گے۔ کہیں گے ہم نہیں جانتے۔ جب تک میں زندہ تھا میں انکی دیکھہ بھال کرتا رہا، جب تو نے مجھہ کو اٹھا لیا تو پھر تو انکا نگران تھا میں کچھہ نہیں جانتا کہ انہوں نے کیا کیا۔ اس طرح سے وہ اپنی براءت کریں گے۔ اچھا اسی قرآن میں یہ بتایا گیا ہے عیسائیوں کے تعلق سے اور عیسٰی (علیہ السلام) کی جوعبادت کرتے تھے کہ یہ لوگ ایسے شخص کی عبادت کرتے ہیں جو ان کو نہ نفع دے سکتا ہے نہ نقصان دے سکتا ہے۔ تو معلوم ہوا کہ وہ عیسٰی (علیہ السلام) کی عبادت کرتے تھے اور عیسٰی (علیہ السلام) نفع نقصان نہیں دے سکتے۔ اب مسئلہ یہ ہے کہ عیسٰی (علیہ السلام) کی عبادت جو وہ کر رہے تھے تو کیا انکی اطاعت بھی کر رہے تھے؟ میں نے ان سے پوچھا: عبادت تو ثابت ہوئی، قرآن نے بھی انکے اس عمل کو عبادت ہی کہا ہے، تو کیا عیسائی جو انکی عبادت کرتے ہیں یا کر رہے تھے تو انکی اطاعت بھی کر رہے تھے؟ اطاعت تو نہیں کر رہے تھے۔ عیسٰی (علیہ السلام) نے کبھی حکم نہیں دیا کے میری عبادت کرو، بلکہ اسے منع کیا ہے۔ تو وہ انکی معصیت کر رہے تھے۔ اطاعت کے بجائے نافرمانی کر رہے تھے اور وہ عبادت تھی۔ تو عبادت کے لئے ضروری نہیں ہے کے جسکی عبادت کی جائے اسکی اطاعت بھی کی جائے۔ بغیر اطاعت کے بھی عبادت ہو سکتی ہے اور نافرمانی کے صورت میں بھی عبادت ہو سکتی ہے۔ اسکو عبادت نہیں کہیں گے۔ یہ مسئلہ ہے، بالکل صاف ہو جاتاہے۔ اب صاف ہونے کے بعد آپکو کیا جاننا چاہئیے؟ کسی کے حکم کو ماننا اور بجا لانا یہ اسکی اطاعت ہے۔ اور کسی کے تقرب کے لئے یعنی اسکی رضا کے لئے اور اسباب سے بالاتر ہو کر کے اسکی رضا کی جو صورت ہوتی ہے اس رضا کے لئے کوئی کام کرنا یہ اسکی عبادت ہے۔ تو وہ لوگ عیسٰی (علیہ السلام) کی رضا کے لئے کام کرتے تھے لہذا یہ ان کے عبادت تھی، اور انکی فرمانبرداری نہیں کرتے تھے لہذا اطاعت نہیں تھی۔ ہم نماز پڑھتے ہیں تو اس سےاللہ تعالٰی کی رضا چاہتے ہیں اور اسکا تقرب چاہتے ہیں، اس معنی میں یہ نماز عبادت ہے۔ اور اللہ نے جو حکم دیا ہے اسکو بجا لا رہے ہیں، اس معنی میں یہ اسکی اطاعت ہے۔ اطاعت دوسرے معنی میں ہے عبادت دوسرے معنی میں ہے۔نماز ایک کام ہے مگر اس میں دونوں چیزیں جمع ہیں، اطاعت بھی ہے اور عبادت بھی ہے۔ اب مولانا مودودی نے چونکہ یہ نقطہ نکالا تھا کہ کسی کی مستقل اطاعت کرنا ہی عبادت ہے لہذا وہ کہتے تھے کہ بندہ اگر اللہ تعالٰی کی اطاعت میں زندگی گزارتا ہے تو ساری زندگی اسکی عبادت ہو جائےگی۔ تو انکے نقطہ نظر سے تو ظاہری بات ہے یہ عبادت ہو جائے گی۔ لیکن ظاہر بات ہے یہ قرآن کا جو نقطہ نظر ہے اسکے اعتبار سے یہ ساری زندگی یہ عبادت نہیں ہو گی۔ اطاعت البتہ ہو گی، اگر اللہ تعالٰی کا حکم وہ بجا لایا ہے تو ساری زندگی اس نے اطاعت کی ہے، اور یہ کار ثواب ہے اور اسکا اسکو ثواب ملے گا۔ لیکن اسکو عبادت نہیں کہیں گے۔ صحیح معنی یہی ہے شیخ کی اردو تقریر کے آخر میں موجود سوال وجواب کی نشست سے لیا گیا​